After meeting Mohan Bhagwat Jamiat Ulema-e-Hind supports govt on Kashmir and NRC across India

10
Maulana Arshad Madani and Mahmood Madani

By Muslim Mirror Staff

New Delhi : After meeting leaders of RSS including RSS supremo Mohan Bhagwat, members of Jamiat Ulema-e-Hind have come out openly supporting government on Kashmir crisis and even NRC across India.

It’s Mahmood Madani of Jamiat Ulema-e-Hind has supported the Centre’s Narendra Modi government on the abrogation of Article 370 and demanded the rolling out of Assam-like NRC across India.

It is pertinent to mention that Mahmood Madani’s  uncle  and Jamiat’s chief Maulana Arshad  Madani met with RSS  Chief Mohan Bhagwat last week for an hour-long chat.

 “The NRC should be conducted in the whole country as it will help in knowing how many intruders are here. Even those who are genuine are being blamed. Hence it should be done. I have no problem with that,” said Mahmood Madani after the meeting.

Interestingly only a week after the meeting with RSS chief,  the General Council of the Jamiat Ulema-e-Hind, now today passed a resolution stating that Kashmir is an integral part of India and supported government’s stand on identifying foreigners in the country.

It is our firm belief that the welfare of the people of Kashmir lies in getting integrated with India. The inimical forces and the neighboring country are bent upon destroying Kashmir. The enemy has made Kashmir battlefield using Kashmiris as shield which makes it the biggest hurdle in rescuing the people from the impasse,” the resolution on Kashmir adopted by the Jamiat on Thursday reads.

Also Regarding the National Register of Citizens (NRC).Madani  said that I want NRC to be done in the whole country. ‘It will be known how many intruders live in our country,’ he said.

 Briefing about the decision of the organization on NRC, Maulana Qari M Usman Mansoorpuri, president, Jamiat Ulema-e-Hind said that they are supporting the decision.”Who is Indian who is not should be known. Other countries are doing it, we should do it too,” he said.

10 COMMENTS

  1. This again an example of unethical journalism. The reporter must have made it clear that now there are groups of Jamiatul Ulema e Hind.One is led by Maulana Arshad Madani , the youngest brother of Maulana Arshad Madani , a person of lage following and a man respected across the specterum.The other one is controlled by the grand son of Maulna Hussain Madani.Compartively young , dynamic and ambitious and a man of changing political loyalties. Maulana Arshad Madani is the one who has, wrongly or rightly , iniated a dialogue with RSS- a sworn enemy of Islam.
    The first round of the talk took place a week ago lasting for about an hour. The outcome of this meeting is yet to be known.The other group of Jamiatul Ulema led and controlled by Maulana Mahmood Madni has enorsed the aborgation of article 370 over Kashmir and also advocated the extention of NRC to all parts of India. Well you are within your rights if you condemn Mahmood Madani as he appears to be siding with evil actions and evil designs of a monstorous regime.But how you try to tarnish the image of Arshad Madani who has nothing to do with politics of Arshad Madani.Maulana Arshad Madani has so far neither joined a political party nor has enjoyed any governmental privileges .His move to start a dialogu with fascist group like RSS can be questioned but his sincerety can not be brought to doubt.This act of naming two divergent persoanalties in the same breath is not a demonstration of hounest journalism. S.M . Anwar Hussain, ex President AMUSU.

    • There is nothing official like “two groups” , we are bound to follow the official statement of any organization. Maulana Arshad Madni and Mahmood Madani both are leaders of JUH.

    • Supporting the decision of Modi in abrogation of article 370 in Kashmir and the atrocious way they did it, is like supporting the barbarism and blatant violation of human rights, being committed against innocent muslims. This is alike the Kufis who deceived Imam Hussain and Imam Muslim and surrendered before Ibne Ziyad’s power.

  2. We deceived and cheated by name sake Muslims of name sake Muslim league of Jinnah and other unislamic leaders.
    We would have followed jamiat ulama e hind during partition then India and Muslim’s of subcontinent would have been in different state.
    I support Jamiat ulama e hind Hikmat and strategies.
    We are not the slaves of so called secular parties

  3. Imam Abu Hanifa :
    ” If the ‘Ulema’ are not God’s friends, then God had no friends in the world ! ”

    With knowledge, power and respect, comes great responsibility.

    Shame on bikau wisdom of some people.

    Allah gives true hikmah/wisdom only to Islamic scholars having Ikhlas/sincerity of intention and those who respect experienced Shoura.

    Maulana Arshad Madani sahab is absolutely correct in holding dialogue with Mohan Bhagwat of RSS to try to find a good solution to end his hatred against Muslim and human equality.

    Alhamdulillah, Maulana Arshad sahab did not fall down to his knees in chaatukarita for MP seat and 500 crore rupees!

  4. There are 2 different factions within Jamiat ilema Hind ….Mr Mahmood (MP)has formed his own sectarian group.

    Its confusing..

    Why Muslim Scholars Arshad Madani & Mahmood Madani Praised Narendra Modi, RSS and Mohan Bhagwat https://www.thequint.com/news/politics/arshad-mahmood-madani-jamiat-mohan-bhagwat-narendra-modi-article-370-muslims

    In Economic Times on 2nd September 2019, a report misleadingly says that Maulana Arshad Madani supports NRC in Assam and country, then also says…..

    “Maulana Syed Arshad Madani said that Jamiat stands by all those who have been left out in the NRC, irrespective of their faith.”

    Our Firqaparast Indian Muslims do not learn English, nor do they read or bother about their future existence; nor do they struggle to establish an independent Muslim truthful media in English especially.
    Hindustani/Urdy language media with Devnagari script for English illiterates.

    Muslim Mirror and all other Milligazette, twocircles, etc have very meagre Muslim readers, who can never bring effective positive change for a better future of 250 million/25 crores Indian Muslims.

    Can these come together?
    Will Indian Muslims contribute 20% of annual Zakaat, sadaqa and interest money to truthful, non-chaatukaari Indian Muslim media…who fights for their human and constitutional rights and honest ballot paper elections without fear or sycophancy?
    Period!

    P.S… Someone, Please translate in Urdu for our fan-struck Maulanas and send them a letter by Shahi pigeons!

  5. این آر سی اور کشمیر مسئلہ پر
    جمعیة العلماءاور اہلحدیث ہند کا موقف کیا جملہ مسلمانوں کی ترجمانی ہے؟
    تنویر احمد، کلکتہ
    جس طرح آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین ایک سیاسی جماعت ہوتے ہوئے بھی ہندوستان کے جملہ مسلمانوں کی نمائند جماعت نہیں تو ایک خاص مکتب فکر سے تعلق رکھنے والی مذہبی تنظیم مرکزی جمعیت اہلحدیث ہندکو این آر سی یا کشمیر کے معاملات میں تمام اہلحدیثوں کا ترجمان یا نمائندہ کیسے مان لیا جائے؟؟ ۔ جہاں تک جمعیت علماءہند کا تعلق ہے تو اس کے سیاسی افکار ”متحدہ قومیت “ میں مضمرہے جس کا اظہارحضرت مولانا حسین احمد مدنی رحمة اللہ نے اپنی تصنیف ” متحدہ قومیت اور اسلام “ میں کیاہے۔ ”متحدہ قومیت “ کا نظریہ اپنے الفاظ و معنی سے ہی ظاہر ہے کہ یہ دو قومی نظریہ کے خلاف ہے جو درحقیقت تقسیم ہند کا سبب بنا۔ اس وجہ سے ملک کے کئی بڑے دانشوروں، صحافیوں اور رہنماوں نے جمعیت علماء اور اہلحدیث کے قائدین کی حالیہ سرگرمیوں پر سوال اٹھایا ہے کہ وہ مسلمانان ہند کو اعتماد میں لئے بغیر آر ایس ایس اور بی جے پی کے بڑے لیڈروں سے نہ صرف ملاقاتیں کر رہے ہیں بلکہ کشمیر کے متنازعہ دفعہ 370 کو منسوخ کرنے نیز این آر سی کی دیگر ریاستوں میں نفاذ کی حمایت بھی کر رہے ہیں۔بلا شبہ سیاسی طور پریہ ایسے سلگتے مسائل ہیں جس کا تعلق مسلمانوںسے بھی ہے ۔ لیکن متحدہ قومیت کا نظریہ رکھنے والی تنظیم، جمعیت علماءہند کا ” ہندوتوا“ کے چوکھٹ پر قدم رکھنے سے قبل اسے نہ صرف اپنے سابقہ موقف کا جائزہ لینا چاہئے بلکہ ملک کے دیگر ملی اداروں آل انڈیا مسلم پرسنل لاءبورڈ، مجلس مشاروت، جماعت اسلامی ہند وغیرہ جیسی تنظیموں کو بھی اعتماد میں لینا چاہئے۔ کیونکہ عوامی سطح پر تو یہ بحث چل پڑی ہے کہ 2011 میں گجرات کے وزیراعلی رہے نریندر مودی کی بابت مفاہمتی موقف رکھنے والے دارالعلوم دیوبند کے سابق مہتم مولانا غلام محمد وستانوی کا آخر کیا قصور تھا جنہیں دارالعلوم دیوبند سے بر طرف کرنے میں دیگر منتظمین کے علاوہ جمعیت علما ہند کے یہی مدنی قائدین بھی شامل تھے؟ آر ایس ایس کی ”ہندتوا “ قوم پرستی اور بی جے پی کی سیاسی نظریات سے مفاہمت ہی کرنی تھی تو مولانا غلام محمد وستانوی کو دھتکار کر کیوں گزشتہ آٹھ سالوں کا زمانہ برباد کیوں کیا گیا ؟؟ اگر یہ مفاہمت اور پہلے ہو جاتی تو کم از کم گﺅکشی کے نام پر کئی ا فراد ہجومی تشدد کے شکار ہونے سے بچ جاتے ۔
    واضح رہے کہ مولانا غلام محمد وستانوی کودارالعلوم دیوبند کے مہتمم مولانا مرغوب الرحمٰن کے انتقال کے بعد 10جنوری 2011میں مہتمم مقرر کیا گیا تھا۔ انھوں نے 18جنوری اسی سال کو ایک قومی انگریزی روزنامے کو انٹرویو دیتے ہوئے گجرات کے وزیرِ اعلیٰ نریندر مودی کی تعریف کی تھی اور کہا تھا کہ مسلمانوں کو 2002ء کے فسادات فراموش کرکے آگے بڑھنا چاہیئے۔انھوں نے یہ بھی کہا تھا کہ نِریندر مودی کی سرپرستی میں گجرات میں ترقیاتی سرگرمیاں جاری ہیں اور ان میں مسلمانوں کے ساتھ کوئی امتیاز نہیں برتا جاتا۔ مولانا وستانوی جو خود بھی گجرات کے باشندے ہیں اور ان کے اِس بیان پر زبردست تنازعہ ا±ٹھ کھڑا ہو تھاا اور انھیں ہٹانے کا مطالبہ جب زور پکڑا تو اگلے ہی روز ا±نھوں نے ایک بیان میں نِریندر مودی کو فسادات سے بری الذمہ قرار دینے کی تردید کی اور کہا کہ، ’ گجرات کے فسادات انسانیت کی پیشانی پر داغ ہیں‘۔ لیکن، ان کے مخالفین کا کہنا ہے کہ جو شخص نِریندر مودی کی تعریف کرتا ہو اسے اِس اسلامی درسگاہ کا سربراہ بننے کو کوئی حق نہیں ہے۔ اِس معاملے میں دارالعلوم میں بھی کا فی انتشار پھیلا حتی کہ مولانا ارشد مدنی اور اسوقت کے رکن پارلیمنٹ مولانا محمود مدنی کی سربراہی والے جمعیت علمائے ہند کے دونوں گروپ بھی اِس تنازعے میں کود پڑے ہیں ۔ اور فیصلہ مولانا غلام محمد وستانوی کی برطرفی پر ختم ہوا۔ اِس فیصلے کا اعلان ادارے کی 13رکنی مجلسِ شوریٰ نے اپنے دو روزہ اجلاس میں تفصیلی تبادلہ خیال کے بعد کیا۔بتایا جاتا ہے کہ مولانا وستانوی کے حق میں چار جب کہ مخالفت میں نو ارکان نے ووٹ دیا۔فیصلے پر اپنے ردِ عمل میں وستانوی نے الزام لگایا تھاکہ ان کے خلاف’ سازش کی گئی ہے‘۔ ا±ن کے بقول، ”بعض طاقتور لوگ نہیں چاہتے تھے کہ وہ اپنے عہدے پر فائز رہیں، اور ا±ن لوگوں نے اِس معاملے کو سیاسی رنگ دیا ہے“۔
    ملحوظ خاطر رہے کہ این آر سی کا مسئلہ ایک سیاسی حربہ ہے جس کا تعلق صرف اور صرف آسام سے ہے۔ ملک کی دیگر ریاستوں میں بھی اس کے جواز کا قائل ہو جانا اور غیر قانونی طور پر اسکے نفاذ کا اصرار کرنا ہی ہماری ملی تنظیموں کے قائدین کا غیر متعلق اور بے محل ردعمل یا تگ و دو ہے جس کے بہانے وہ وزیر داخلہ کی رہائش گاہ تک جا پہنچے ہیں۔ جہاں تک جمعیة العلما اور اہلحدیث ہند کا دفعہ370 کی منسوخی کی حمایت کا موقف ہے تو یہ صورتحال بھی ملک کے عوام کی خواہش کے موافق اسی وقت ہوتی جب قائدین جمعیت علمائے ہند اور اہلحدیث تمام سیاسی پارٹیوں کے لیڈران کے ساتھ کشمیر کا دورہ کرنے کی کوشش کرتے۔ دونوں جمعیتوں کے قاائدین کشمیریوں کو اعتماد میں لینے کے ضمن میں وزیر داخلہ شری امیت شاہ سے درخواست کرتے کہ انہیں حالات معمول پر لانے کی کوشش کا ایک موقع دیا جائے کہ وہ کشمیر میں تمام پارٹیوں کے ہمراہ جا کر وہاں کے لوگوں سے کہیں کہ ہم سارے ہندوستانی آپ کے ساتھ ہیں۔ انہیں کھلی ہوا میں سانس لینے کا موقع فراہم کروانے کا موقع پیدا کرتے جو تقریباً دو مہینوں سے اپنے گھروں میں محصور ہیں۔ ہر چند کہ کشمیر میں مسلمانوں کی اکثریت ہے لیکن کشمیر کا دفعہ 370 سے تعلق صرف وہاں کے مسلمانوں کا نہیں ہے بلکہ سکھوں اور ہندوں کا بھی ہے۔ کشمیری عوام درحقیقت اس وقت اپنوں ہی کے نظریاتی اورسیاسی حصار میں قید ہے۔لیکن افسوس وہی جمعیة العلما ہند جس کی تاریخ میں بہترے ملی خدمات کا توصیفی طومار ہے، اورجمعیت اہلحدیث ہند دونوں کی ترجیحات اس وقت کچھ بے مروتی پر مبنی ہیں۔ ایک طرف جمعیت علمائے ہند جو بہ ظاہر ” متحدہ قومیت“ کی نظریات سے مصالحت پر آمادہ ہے اور دوسرے قائد جمعیت اہلحدیث ہند ہیں کہ ملک کے ملی درد کو بھول کرآرمکو کی تیل تنصیبات پر خارجی حملوں سے بلبلا رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here